ads

Post Top Ad

Monday, 7 December 2020

پاکستان منشیات کی لت کا اجتماعی مقابلہ کریں گے: وزیر اعظم عمران خان

Prime Minister Imran Khan said that Pakistan would collectively fight the scourge of drugs across the country. Speaking at the inauguration of the anti-drug headquarters in Rawalpindi on Monday, the Prime Minister said that drugs were like a cancer that had taken root in the society. "Drugs are silent killers. Unfortunately, this problem has infiltrated schools. We have to tackle this problem collectively," he said.

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان ملک بھر میں منشیات کی لعنت سے اجتماعی طور پر مقابلہ کرے گا۔


پیر کو راولپنڈی میں انسداد منشیات ہیڈ کوارٹر کے افتتاح کے موقع پر ، وزیر اعظم نے کہا کہ منشیات ایک کینسر کی طرح ہیں جو معاشرے کی جڑوں میں پھیل چکی ہے۔


انہوں نے کہا ، "منشیات خاموش قاتل ہیں۔ بدقسمتی سے ، اس مسئلے نے اسکولوں کو گھس لیا ہے۔ ہمیں اجتماعی طور پر اس مسئلے کا مقابلہ کرنا ہوگا۔"


وزیر اعظم خان نے نشاندہی کی کہ صرف پولیس یا سیکیورٹی فورسز ہی معاشرے سے منشیات یا بدعنوانی کا خاتمہ نہیں کرسکتی ہیں۔ یہ ایک ایسی جنگ ہے جس کو پوری قوم کو لڑنا ہے۔ "جرم کے خاتمے کے لئے ، ہمیں پہلے اسے قبول کرنا اور اسے تسلیم کرنا ہوگا۔"


سنگاپور کی مثالوں کا حوالہ دیتے ہوئے ، انہوں نے کہا کہ جرائم کے خاتمے کی وجہ سے یہ ملک اس جگہ پہنچ گیا ہے جہاں آج ہے۔ "حال ہی میں ملک میں ایک رہنما بدعنوان ثابت ہوا ،" وزیر اعظم نے کہا ، "اس شخص نے اپنی جان لے لی کیوں کہ وہ جانتا تھا کہ اب اسے معاشرے کے ذریعہ قبول نہیں کیا جائے گا۔"


منشیات اور بدعنوانی دو چیزیں ہیں جن کا مقابلہ معاشرے اور حکومت کے ساتھ ہونے پر ہوسکتا ہے۔ "ملک میں 70 ملین سے زائد نوجوان شہری ہیں جو منشیات کے عادی ہیں۔"


وزیر اعظم نے نشاندہی کی کہ جب کوئی شخص نشہ کا عادی ہوجاتا ہے تو ان کا پورا کنبہ ان کے ساتھ مبتلا ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ملک میں 70 ملین منشیات کے عادی ہیں ، تو اس کا مطلب یہ ہے کہ 70 ملین خاندان جدوجہد کر رہے ہیں۔


وزیر اعظم خان نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ملک میں انسداد منشیات مہم شروع کی جائے گی اور تمام وزارتیں منشیات کے خلاف اپنا کردار ادا کریں گی۔ "میں نے آپ کے مطالبات سنے ہیں اور میں ان پر اگلے ہفتے ہونے والی میٹنگ میں کام کرنا شروع کردوں گا۔"

No comments:

Post a Comment

Post Top Ad

مینیو